مارکسی تعلیم

’’سرمایہ کاری‘‘ کا عارضہ

’’سرمایہ کاری‘‘ کا عارضہ

| تحریر: لال خان | پاکستان کی سیاسی اشرافیہ، اس کے دانشور اور معیشت دان ’’سرمایہ کاری‘‘ کو معاشی ترقی کا جادوئی نسخہ بنا کر پیش کرتے ہیں۔سامراج کے حکم پر نافذ کی جانے والے دوسری نیو لبرل پالیسیوں کی طرح ’’فارن ڈائریکٹ انویسٹمنٹ‘‘ کا مفروضہ ناقص ہی نہیں بلکہ […]

مارچ 28, 2015 ×
علاج کا بیوپار!

علاج کا بیوپار!

| تحریر: لال خان | ایک تواتر و تسلسل کے ساتھ، اٹھتے بیٹھتے ہمیں بتایا جاتا ہے کہ مقابلہ بازی کی غیر یقینی صورتحال اور منافع کی ہوس ہی سائنس و ٹیکنالوجی کو نئی ایجادات اور دریافتوں کی طرف لے جانے کا باعث بنتے ہیں۔ ہمیں بتایا جاتا ہے کہ […]

فروری 25, 2015 ×
بدلتے رشتے

بدلتے رشتے

[تحریر: لال خان] ایک وقت تھا جب سفارش سے بڑے کام کروائے جاتے تھے۔ ان زمانوں میں منافع خوری کے لئے ذخیرہ اندوزی بھی ہوا کرتی تھی۔ آج کے زمانے میں یہ طریقے بہت ’’کمزور‘‘ ہوگئے ہیں۔ حکمران طبقے اور سامراجی کمپنیوں کی شرح منافع میں اضافہ اب ذخیر اندازی […]

جنوری 22, 2015 ×
وقت کی بڑھتی قلت

وقت کی بڑھتی قلت

[تحریر: لال خان] کتنی مصروفیت ہے! ہر کوئی، ہر وقت کہیں زیادہ مصروف نظر آتا ہے۔ وقت جوں جوں گزرتا جارہا ہے، کم پڑتا جارہا ہے۔ کام کرنے والے تو مصروف ہیں ہی، جو کام نہیں کرتے وہ کہیں زیادہ مصروف ہیں۔ گزرے وقت کی اہمیت اور بھی زیادہ محسوس […]

دسمبر 30, 2014 ×
معروضی اور موضوعی قدر کی بحث

معروضی اور موضوعی قدر کی بحث

| تحریر: عمران کامیانہ | ’’ایک انقلابی نظرئیے کے بغیر کوئی انقلابی تحریک برپا نہیں ہوسکتی‘‘ (ولادیمیر لینن) آج کے پرانتشار عہد میں ’’نظریہ قدر‘‘ (Value Theory) کی بحث بظاہر دانشوروں کا شغل معلوم ہوتی ہے جس کا ’’عملی‘‘ سیاسی جدوجہد سے کوئی واسطہ نہیں ہے۔ تاہم نظریہ قدر سرمایہ […]

دسمبر 24, 2014 ×
بہتات میں قلت سے سسکتی انسانیت

بہتات میں قلت سے سسکتی انسانیت

[تحریر: عدیل زیدی] سرمایہ دارانہ نظام کے تحت صنعتی انقلاب بنی نوع انسان کے لئے وہ تکنیکی، سماجی و معاشی ترقی لایا جو ماضی کا کوئی نظام نہیں دے پایا تھا۔ تاہم زائد پیداوار کا بحران سرمایہ داری کے خمیر میں شامل ہے جسے اس نظام کی حدود و قیود […]

دسمبر 23, 2014 ×
پہلی انٹر نیشنل کے قیام کے 150سال

پہلی انٹر نیشنل کے قیام کے 150سال

آج کے عہد میں انقلابی انٹرنیشنل کی ضرورت!

نومبر 12, 2014 ×
عالمی تنازعات کے محرکات، مذہبی یا سیاسی؟

عالمی تنازعات کے محرکات، مذہبی یا سیاسی؟

’’عالمی تنازعات کے محرکات، مذہبی یا سیاسی‘‘ کے موضوع پر کامریڈ لال خان اظہار خیال کر رہے ہیں۔

اکتوبر 31, 2014 ×
لڈوگ فیورباخ اور کلاسیکل جرمن فلسفے کا خاتمہ

لڈوگ فیورباخ اور کلاسیکل جرمن فلسفے کا خاتمہ

مارکسی فلسفے (جدلیاتی مادیت) کے ارتقا پر تحریر کی گئی فریڈرک اینگلز کی شہرہ آفاق کتاب ’’لڈوگ فیورباخ اور کلاسیکل جرمن فلسفے کا خاتمہ‘‘ کا اردو ترجمہ اپنے قارئین کے لئے شائع کر رہے ہیں۔ یہ کتاب پہلی بار 1886ء میں شائع ہوئی تھی اور اینگلز کے مطابق 1846ء میں […]

اکتوبر 26, 2014 ×
ٹیکنالوجی: رحمت یا زحمت؟

ٹیکنالوجی: رحمت یا زحمت؟

[تحریر: لال خان] آج کے عہد میں بیشتر افراد کی زندگی میں موبائل فون کا کردار جسم کے کسی عضو سے بھی زیادہ اہمیت اختیار کرتا جارہا ہے۔ گھر کے اندر باہر، سوتے جاگتے، ہر انسان نے موبائل پکڑ رکھا ہے اور اس موبائل نے انسان کو جکڑ رکھا ہے۔ […]

اکتوبر 15, 2014 ×
اجرت میں اضافے کی لڑائی

اجرت میں اضافے کی لڑائی

[تحریر: راشد خالد] محنت کشوں کے روز و شب کی تلخی کی کس کو فکر ہے۔ ہر روز زندگی مہنگی ہوجاتی ہے اور موت سستی۔ دوسری جانب حکمران طبقات محنت کشوں کے خو ن اور پسینے سے پیدا کردہ دولت پر عیاشی کی زندگی گزارتے ہیں۔ محنت کش جب اپنی […]

اکتوبر 4, 2014 ×
اصلاح پسندی کی نامرادی

اصلاح پسندی کی نامرادی

[تحریر: لال خان] 2013ء کی انتخابی مہم میں عمران خان کا وقتی ابھار شدید سماجی بحران، سیاسی جمود اورعمومی سوچ اور نفسیات کے گہرے ابہام کا نتیجہ تھا۔ یہ کیفیت ہمیں عالمی سطح پر کئی ممالک میں نظر آتی ہے۔ خاص کر 2008ء کے بعد سے اٹلی سے لے کر […]

ستمبر 28, 2014 ×
لینن

لینن

تحریر: لیون ٹراٹسکی، ترجمہ: حسن جان سوویت جمہوریہ اور کمیونسٹ انٹرنیشنل کے بانی اور روح رواں، مارکس کے شاگرد، بالشویک پارٹی کے رہنما اور روس میں اکتوبر انقلاب کے منتظم ولادیمیر لینن، 9 اپریل 1870ء کو سمبرسک کے قصبے (اب الیانوسک) میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد الیانکولاوچ ایک سکول […]

اگست 30, 2014 ×
بورژوا جمہوریت سے سوشلزم تک

بورژوا جمہوریت سے سوشلزم تک

ولادیمیر لینن کے ہمراہ بالشویک انقلاب کے قائد اور 21سامراجی افواج کو شکست فاش دینے والی انقلابی سرخ فوج کے بانی کامریڈ لیون ٹراٹسکی کی 74ویں برسی کے موقع پر ان کی شہرہ آفاق تصنیف ’’انقلاب روس کی تاریخ‘‘ سے ایک اقتباس شائع کیا جارہا ہے۔ اس تحریر میں ٹراٹسکی […]

اگست 20, 2014 ×
مارکس، اینگلز اور ادب

مارکس، اینگلز اور ادب

[تحریر: ب۔ کرایلوف، ترجمہ: حسن جان] مارکس اور اینگلز عالمی آرٹ کو بخوبی جانتے تھے اور ادب، کلاسیکی موسیقی اور مصوری سے حقیقی آگاہی رکھتے تھے۔ اپنی جوانی میں دونوں نے شاعری بھی کی حتیٰ کہ ایک دفعہ اینگلز نے شاعر بننے کے بارے میں سنجیدگی سے سوچا بھی۔ اُنہیں […]

اگست 18, 2014 ×